Man Pasand Shadi | Love Marriage

 

  آج ہر دوسرا شخص اس مسئلے کا شکار نظر آتا ہے یہ آج کے دور کا بہت بڑے مسائل میں شمار ہوتا ہے پسند کی شادی کا مسئلہ بہت عام ہو گیا ہے اسکی بنیادی وجہ ہم روشن خیال یا بہت زیادہ اوپن مائینڈ ہوتے جا رہے ہیں پسند کی شادی کوئی بری بات نہیں اسلام اسکی اجازت دیتا ہے مگر کیا اپنے ماں ، باپ گھر بار سب کو ناراض کر کے اپنی مرضی سے شادی کرنا کوئی مناسب بات ہے جی نہیں ہرگز مناسب نہیں کے آپ اپنی خوشی کے لئیے سب کو ناراض کر دیں اور ماں ،باپ کا جب دل دکھتا ہے پھر کوئی خوشی دل کا سکون نہیں بنتی اللہ عزوجل بھی ناراض ہو جاتا ہے آپ اپنی پسند کی جگہ شادی ضرور کریں لیکن اپنے والدین کو بھی راضی کریں انکو پیار و محبت سے بتائیں کوئی ماں ، باپ اتنا ظالم نہیں ہو سکتا کہ وہ آپ کی خوشی کی خاطر رضامند نہ ہوں اصل میں ہم سے صبر نہیں ہوتا ہم اکثر جلد بازی میں غلط قدم اٹھا لیتے ہیں جو بعد میں شرمندگی کا باعث بنتا ہے اگر ہم تھوڑا صبر سے کام لیں تو یقیناََ سب معملات خوش اصلوبی سے حل ہو جائیں بحرحال مرد کے لیئے پسند کی شادی قدرے آسان ہے عورت کی نسبت اسی لیئے پسند کی شادی کے لیئے زیادہ مشکل حالات کا سامنا کرنا پڑتا ہے اگر آپ پسند کی شادی کرنا چاہتے ہیں مگر گھر والے سب ناراض ہیں آپ کی کوشش کے بعد بھی کوئی مثبت نتیجہ نہیں نکلتا تو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں اللہ پاک نے علم میں بہت طاقت رکھی ہے۔

پسند کی شادی روحانی علاج: ہمارے پاس روحانی علم دونوں طرح کا ہے نورانی علم اور سفلی علم اگر آپ کے پاس وقت ہے تو آپ اپنی پسند کی شادی کا مسئلہ نورانی علم سے حل کروا سکتے ہیں اگر آپ کے پاس وقت بہت کم ہے یا آپ کو جلدی ہے تو فوری اثر قدیم جادو سفلی علم سے آپ کی پسند کی شادی کا مسئلہ فوری چند  گھنٹوں میں صوفیصد گارانٹی سے حل ہو جائے گا ایک ضروری بات چند نام نہاد عاملین دھوکہ فراڈ کرتے ہیں جن کے پاس علم نہیں ہوتا حتیٗ کہ وہ صاف جاہل ہوتے ہیں مگر خود کو عامل کامل ظاہر کرتے ہیں ایسے جاہلوں سے بچیں جو حقیقت میں علم کامل رکھتے ہیں وہی سچے عامل ہیں، 
Aj kay dour mei Love Marriage(pasand ki shadi) bohat barra masla banta jaa raha hey iski wajah hum ney apney barrey buzurgon ka adab krna chorr diya hum indian tehzeeb ko apney liay munasib samjhtey hen hum love marriage ko apna haq samjhtey hen yeh bat islam mei hey kisi had tak pasand ki shadi aap ka haq hey lekin kya aap apni khushi ki khatir apney parents ko naraz karen gey jinhon ney aap ko pala posa aap ki parvarish ki unhi ko naraz kar key kya aap kabhi khush reh paayen gey ji nahi hargiz nahi jab parents ka dil dukhta hey tou ALLAH PAK bhi naraz ho jata hey isi liay aap apney haq ko jayez tareeqa sey hasil karney ki koshish karen sab ki raza'mandi sey aap apni love marriage ko arrange marriage bana den yeh koi mushkil kam nahi ismei thorra sabar aur aqal'mandi chaihay aap key parents key liay aapki khushi sey barrh kar kuch nahi woh kabhi aap ki mukhalifat nahi karen gey key agar aap unko peyar sey mohabbat sey adab sey samjhayen gey apni pasand ki jagah shadi karna koi jurm nahi magar parents ko agree karna bhi zaroori hey koi parents bhi apni olaad ki jayez zaroorat sey inkar nahi kar sakta lekin agar aap key haq mei behter nahi aap key parents kabhi uskey liay razi nahi hongey jorrey tou taqdeer mei likhey jaa chukey hen yeh baat kisi had tak drsut nahi lagti keon key Quran Pak mei hey 'nek mard key liay nek aurat aur nek aurat key liay nek mard' isi tarah iska ulat bhi hota hey iska matlab hey yeh aap ki apni shakhsiyat per depend karta hey jo jesa ALLAH ki nazar mei hoga wese usko uska partner miley ga.

Love Marriage ka Rohani ilaj:

Hamarey pas dono tarah key rohani ilm hen (1) Norani ilm , (2) Safli ilm ab yeh aap ki marzi hey agar aap apni pasand ki shadi ka masla hamarey norani ilm sey hal karwana chahtey hen tou usmei time zeyadah lagta hey jab'key safli ilm ki taqat sey (48 sey 72) hours mei aap ka love marriage problem 100% Guarantee sey solve ho jaaye ga aur hum ney kaye love marriage case solve kiay hen pareshan honey ki zaroorat nahi tasalli key sath contact karen.

Contact: amilonline92@gmail.com

No comments:

Post a Comment

>